Archive

Archive for January, 2014

TRIBUTES TO MUSLIM SALEEM BY ZAHINA SIDDIQUI

January 27, 2014 Leave a comment

Zahin Siddui on Muslim_SaleemTRIBUTES TO MUSLIM SALEEM
BY ZAHINA SIDDIQUI, ALL-INDIA RADIO,
URDU MAJLIS, NEW DELHI
HUMDAM HO HUM KHAYAL HO MUSLIM SALEEM TUM , ,,,,,,,
ULFAT KI EK MISAAL HO MUSLIM SALEEM TUM .
JISKA NAHIN JAHANE ADAB MAIN KOI JAWAB , ,,,,,,
AISA HI EK SAWAL HO MUSLIM SALEEM TUM .
TUM SACHCHE QADERDAAN HO URDU ZABAAN KE , ,,,,,,,,,
INSAAN BA KAMAAL HO MUSLIM SALEEM TUM .
ARBAABE ILMO FUN KI NIGAHON MAIN AAJKAL , ,,,,,,,,,
EK HUSN HO JAMAAL HO MUSLIM SALEEM TUM .
KHILTE HAIN JISPE GHUNCHE WAFAON KE PYAR KE , ,,,,,,
PHOOLON KI AISI DAAL HO MUSLIM SALEEM TUM .
BUJHTE HUYE CHIRAAGH JALANE KE WASTE , ,,,,,,,,,
IK NOOR-E-LAA ZAWAAL MUSLIM SALEEM TUM .
AB TO KARO YAQEEN ZAHINA KI BAAT PAR , ,,,,,,,,,
SHAIR KA EK KHAYAL HO MUSLIM SALEEM TUM .

Advertisements
Categories: Uncategorized

SHAHNAZ BANO KI URDU KHIDMAT KA AITIRAF: MUSLIM SALEEM

January 24, 2014 Leave a comment

SHEFFIELD, ENGLAND MAIN MUQEEM SHAIRA SHAHNAZ BANO KI URDU KHIDMAT KA AITIRAF: MUSLIM SALEEM
MARHABA SHAHNAZ BANO! KAAM YEH ACHCHA KIYA
SARZAMEEN-E-GHAIR MAIN URDU KO ZINDA KAR DIYA
YAAD HAIN LOGON KO URDU KI WO BAZM AARAIYAAN
JIN KE BAL ZABAAN NE JHOON KAR ANGDAIYAAN
AAP KE DAM SAY RAWAAN URDU ZABAAN SHEFFIELD MAIN
BE-KHATAR MAHV-E-SAFAR HAI KARWAAN SHEFFIELD MAIN

Categories: Uncategorized

Yad-e-raftagan Manto: Barqi Azmi

January 18, 2014 Leave a comment

Read more…

Categories: Uncategorized

NAZRANA-AQEEDAT BARAI MUSLIM SALEEM SB: AUWWAL SANGRAMPURI

January 13, 2014 Leave a comment

NAZRANA-AQEEDAT BARAI MUSLIM SALEEM SB

AUWWAL SANGRAMPURI

JEDDA, SAUDI ARABAI

HUSN-E-SUKHAN MAIN JO YE TIRAY INSIJAAM HAI

SHAHID HAI, KOI BHI NA TIRAA HAM-MAQAAM HAI

SAARE FUSOON-NIGAAR YE KARTE HAIN AITIRAAF

AB REEKHTE KA TOO HI JAHAAN MAIN IMAAM HAI

BARQ-E-SUKHAN HAI TERI ZIYAA-BAAR HAR TARAF

DAANISH MAIN TERI MEHR-E-SUKHAN TEZ-GAAM HAI

AHL-E-ADAB NAY TUJHKO WO MANSAB ATAA KIYA

SHE’RAA KO JO NUJOOM MAIN HAASIL MAQAAM HAI

TERAY SUKHAN KI FIKR SAY HAM PAR AYAAN HAI YEH

BAAM-E-FALAK KO CHOOMTA TERAA KALAAM HAI

MUSLIM SALEEM SAHIB-E-QALB-E-SALEEM HAIN

UNKA RUKH-E-HASEEN BHI MAAH-E-TAMAAM HAI

MERI DUA HAI HAR KOI HO US SAY MUSTAFEED

URDU ZABAAN PAY AAP KA JO FAIZ-E-AAM HAI

TERAY MURASHSHAHAAT-E-QALAM HAMARA DIL

DAST-E-NAZAR SAY CHOOM KAY KARTA SALAAM HAI

*******************************************

SHE’RAA= NORTH STAR

Auwwal design 1

 

Categories: Muslim Saleem

GRAND FELICITATION TO DR SHAHZAD RIZVI AT BHOPAL Part 1

January 10, 2014 1 comment

ڈاکٹر شہزاد رضوی اور امریکہ میں اردو ادب کی قدآور شخصیت :مسلم سلیم
بھوپال کے فر زند کو پروفیسر آفاق احمد کا بھی خراج: شاندار استقبالیہ منعقد

بھوپال: ۲۹؍ دسمبر ۲۰۱۳واشنگٹن میں مقیم مدھیہ پردیش اور بھوپال کے عظیم فرزند مشہور شاعر اور ناول نگار ڈاکٹر شہزاد رضوی کو ہم سخن ویلفئر سوسائٹی و کھوج خبر نیوز ڈاٹ کام کی جانب سے شاندار استقبالیہ دیا گیا۔ اس موقعہ پرجناب مسلم سلیم نے ڈاکٹر رضوی کو امریکہ میں اردو ادب کی قدآور شخصیت سے تعبیر کیا۔ مہمانِ خصوصی پروفسر آفاق احمد نے بھی ڈاکٹر رضوی کی ادبی خدمات کو سراہا۔ اس سے قبل مسلم سلیم اور پروفسر آفاق احمد نے ڈاکٹر شہزاد رضوی کو ’’فخر بھوپال ‘‘ ٹرافی پیش کی۔ ہم سخن کے سکریٹری جناب عبدالاحد فرحان نے ڈاکٹر رضوی کو منظوم سپاس نامہ پیش کیا دہلی کے مشہور شاعر ڈاکٹر احمد علی برقی ؔ اعظمی نے تحریر کیا تھا۔ ڈاکٹر رضوی کی اہلیہ محترمہ رابعہ رضوی اور دختر ممتاز رضوی بھی اسٹیج پر موجود تھیں۔ پروگرام کا آغاز گلوکار جناب یعقوب ملک نے مسلم سلیم کی تحریر کردہ نعت سے کیا۔
جناب مسلم سلیم نے کہا کہ فی زمانہ ایک خانوادہ امریکہ میں اردو ادب کی سب سے زیادہ خدمت انجام دے رہا ہے جسمیں ڈاکٹر شہزاد رضوی ، انکی ہمشیرہ ڈاکٹر عمرانہ نشتر خیرآبادی ، ناہید نشترخیرآبادی اورر خسانہ وسیم اور برادرِ خورد سید ضیا خیرآبادی شامل ہیں۔ان کے والد یادگار حسین نشتر خیرابادی، والدہ محترمہ سیدہ سرفراز فاطمہ نشتر اور ہمشیرہ سیدہ سہیلہ خیرآبادی بھی اچھے سخنور تھے۔ڈاکٹر شہزاد رضوی ۱۹۶۴ء میں عالم شباب میں امریکہ چلے گئے۔ وہاں انہوں نے مختلف یونیورسٹیوں میں ا علیٰ تعلیم حاصل کی اور پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کرکے پروفیسر ہوگئے۔ اب وہ امریکی شہریت حاصل کرکے واشنگٹن میں اپنے اہل وعیال کے ساتھ عرصہ سے مقیم ہیں۔
جناب مسلم سلیم نے بتایا کہ اردو کے علاوہ ڈاکٹر رضوی انگریزی میں بھی شاعری کرتے ہیں۔ آپ نے انگریزی میں کہانیاں اور ناول لکھنے میں بھی کافی شہرت حاصل کی ہے اور ان کے ناول Kahany.orgپر دیکھے جاسکتے ہیں یا amazom.comسے دستیاب ہوسکتے ہیں۔جناب مسلم سلیم نے اپنے مقالے میں امریکہ میں اردو ادب اور تدریس پر بھی سیر حاصل روشنی ڈالی۔
ڈاکٹر شہزاد رضوی کی حیات و کمالات پر روشنی ڈالتے ہوئے پروفیسر آفاق احمد نے بتایا کہ ڈاکٹر رضوی نے دنیا کی بڑی بڑی یونیورسٹیوں میں تعلیم حاصل کی ۔ انہوں نے موسم گرما کے دوران آکسفورڈ، سوربون(فرانس) اور لندن میں جاکر کورس کئے اور اسی دوران پورے یوروپ کا سفر بھی کیا۔صدر ریگن کے دوران حکومت ڈاکٹر رضوی نے ایوان صدر میں مترجم کی خدمات انجام دیں اور مسز ریگن کے ساتھ بحیثیت مترجم ان کے ہوائی جہاز میں میں سفر کرنے کا موقع بھی ملا، اس دوران میں امریکہ کی مشہور شخصیتوں، جیسے کہ ہنرسی کسنجر، افسران اور اداکار ان سے ملاقات ہوئی۔
پروفیسر آفاق احمد نے بتایا کہ ڈاکٹر شہزاد رضوی وہ اپنی شاعری میں روایتی موضوعات، واعظ، ساقی اور محبوب کی جفاکاری پر نہیں لکھتے۔ ان کی شاعری کے موضوع زندگی اور عالمی مسائل ہوتے ہیں جن سے آج انسان دوچار ہے۔ وہ اپنی شاعری سے مذہبی تفریق اور تعصب ، نسلی امتیاز اور قبائلی اور قومی رسہ کشی اور تصادم کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔ ان کی یہ بڑی آرزو ہے کہ دہشت گردی ہمیشہ ہمیشہ کے لئے ختم ہوجائے اور دنیا کے لوگوں میں ہم آہنگی اور بھائی چارہ پیدا ہوجائے۔ ڈاکٹر شہزاد رضوی صاحب اب تک ۱۲؍ ناول انگریزی میں تحریر کر چکے ہیں جنکے عنوان یہ ہیں۔.ان میں سے دو ناولوں ’’د ا لاسٹ ریسیڈینٹ ‘‘ اور ’’بہائنڈ د ا ویل‘‘ بھوپال کے پس منظر میں تحریر کئے گئے ہیں۔لیکن یہ مکمل طور سے فکتشنل ہیں اور انکابھوپال کے نوابی خاندان سے کوئی تعلق نہیں ہے۔
اپنے خطاب میں ڈاکٹر شہزاد رضوی نے اراکینِ ہم سخن ویلفئر سوسائٹی و کھوج خبر نیوز ڈاٹ کام کا شکریہ ادا کیا۔ڈاکٹر رضوی نے بتایا کہ ان کی پیدائش۲۸فروری ۱۹۳۷ء لشکر گوالیار میں ہوئی جہاں ان کے دادا خان بہادر حضرت مضطر خیرآبادی ایک زمانے میں جج تھے۔ مضطر خیرآبادی علامہ فضل حق خیرآبادی کے نواسے تھے ۔آپ کے خاندان کا ہندوستان کی جنگِ آازدی میں بھی اہم حصہ رہا ہے۔ آپ کے پرنانا حضرت فضلِ حق خیرابادی نے انگریزوں کے خلاف زبردست مہم چلائی تھی جسکی پاداش میں انھیں کالے پانی کی سزا دی گئی تھی اور وہیں انڈومان میں آپ کا انتقال ہو ا تھا۔ڈاکٹر رضوی کی والدہ محترمہ سیدہ سرفراز فاطمہ نشتر کا تعلق بھوپال کے ایک جاگیردار خاندان سے ہے۔ ڈاکٹر رضوی نے حمیدیہ کالج بھوپال سے انگریزی ادب میں ایم اے کی ڈگری حاصل کی۔ اس کے بعد کچھ عرصہ سیفیہ کالج میں لیکچرر رہے۔ اس کے بعد ایک اور ایم اے کی ڈگری انگریزی ادب میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے حاصل کی اور پھر امریکہ چلے گئے۔
اس موقعہ پر ڈاکٹر شہزاد رضوی صاحب نے اپنی متعدد نثری نظموں سے بھی سامعین کو نوازا۔ ڈاکٹر رضوی نے مسلم سلیم کو اردو کے ایک بڑے شاعر اور ادیب سے تعبیر کیا۔ انھوں نے کہا کہ جناب مسلم سلیم انٹرنیٹ کے ذریعے بھی اردو کی بیش بہا خدمت انجام دے رہے ہیں۔
اس دوران رائسین سے تشریف لائے جناب حاجی میاں نے ڈ ایک بیش قیمت قلم اور پروفیسر مجید خاں و ڈاکٹر اعظم نے اپنی کتابیں اکٹر شہزاد رضوی کو پیش کیں۔
شروعات میں کھوج خبر نیوز ڈاٹ کا م کے ایڈیٹر جناب عطاء ا ﷲ فیضان ، ہم سخن کے صدر جناب شارق علی ، جناب بسید فیضان علی، ڈاکٹر انیس سلطانہ ، محترمہ رشدہ جمیل اور جناب مظفر اقبال صدیقی نے مہمانان کی گلپوشی کی اور ہم سخن کے سکریٹری جناب عبدالاحد فرحان نے ڈاکٹر شہزاد رضوی کو منظوم سپاسنامہ پیش کیا۔ جناب سلیم قریشی صاحب سے کہ اظہار خیال فرمایا۔
تقریب کی نظامت خوش فکر شاعر اور ادیب ڈاکٹر اعظم نے فرمائی۔ آپ ہی نے اظہار تشکر بھی کیا۔

Rate This

 

Categories: Muslim Saleem

NAZRANA-E-AQEEDAT BAKHIDMAT MOHTARAM MUSLIM SALEEM SB

January 10, 2014 Leave a comment

 

NAZRANA-E-AQEEDAT BAKHIDMAT MOHTARAM MUSLIM SALEEM SB
TARIQUE MOHIUDDIN, PATNA, BIHAR (INDIA)
Ek rahbar ik mujahid aaj Urdu ko mila,
Main tou kahta hooN ke beshak taaj Urdu ko mila.
Her jagah Urdu zabaaN ko zakhm hi kaari miley,
Iss ke haq mein jo miley woh dar ke darbaari miley.
Sher kahna sher sunana aur iss per tabsira,
RotiyaN kuchh seNk leeN aur pet apna bhar liya,
Lad khadhayi gir padi, sambhi, yeh phir gir kar uthhi,
Silsila chalta raha murjha gayi nazuk kali.
Iss ke sar par be-tuka bohtaan bhi rakkha gaya,
Iss pay dushman ki zabaaN keh kar sitam dhaaya gaya.
SaazishoN ke teer se phir iss ka dil chhalni hua,
Zer-e-maqtal ik tamasha raqs-e- bismil bhi hua.
Her qadam per thokareN theeN, thhe masayeb bhi baday,
Kah rahe thay sab yahi dushwaar hain yeh marhale.
Her tarah maayoosyoN ka chha geya iss per gahan,
Iss ghata ke beech ubhri phir khushi ki ik kiran.
Aur phir aisi sada uthhnay lagi Bhopal se,
Tum nikaalo ab tou iss ko sazishoN ke jaal se
AafreeN sad AareeN uthta raha paiham qadam,
Ek wehshat, ik janooN tha saath uss ke dam badam.
Woh mujahid kaun hai takraya jo toofaan se,
Hind ki sarhad mila di kis ne Pakistan se.
Un ki azmat ko kareN jhuk ker zara hum bhi salaam,
Naam hai Muslim Saleem unka kareN hum ehteraam.
Dekh len unki inaayat kya yahaaN Urdu ko hai,
Zaat aisi mohtaram kyoN rashk -e- jaaN Urdu ko hai.
Hai suroor-e-jaaNfiza unka kalaam-e-laajawaab
Shairi unki hai jaise dard ka darmaaN janaab,
Chust hai lafzon ki bandish, hai ajab tarz-e-bayaan
Maat hain nok-e-qalam ke saamnay tegh-o-sinaaN
Fikr hai sab say alag, sab say achoota hai kalam
Is main koi shak naheen hai dil ko chhoota hai kalaam,
Kya takhayyul, kya yeh andaaz-e-bayaaN hai dosto!
Iftikhar-o-naazish-e-ahl-e-zabaaN hai dosto!
Ilm aur fan ka Aligarh say inheN tuhfa milaa,
Darja-e-awwal say B.A tak waheeN seekha-parhaa.
Aap bhi iss ka asar dekheN ge inki zaat meiN,
Qaum ka gham jaise Sir Syed ko tha, din mein raat meiN.
Phir Allahabad say Arabi meiN M.A bhi kiya,
Akbar-o-Ibn-e-Safi ki sarzameeN par gul khila
Naazish-e-sher-o-sukhan Muslim ko logon ne kahaa,
Dekh leN site pe inki kis qadar hai tabsira.
Bazm inke naam ki sajti hai subh-o-shaam ab,
Rok sakti hi nahi hai gardish-e-ayyaam ab.
Ek maktab, ik idara ilm-o- daanish ka khula,
Le rahe hain faiz in se dekhye hum barmala.
Aap ke charche naheen bas Hind-o- Pakistan mein,
Tazkire hote hain ab to Cheen mein, Japan mein.
Her idaray say mileen asnaad inko be-shumaar,
Shair-e-yakta, kaha be-misl Afsana nigaar.
Aap ki khidamt adab mein hum likheN to kya likheN,
Aap ke rutbe maratib jo likheN thoda likheN.
jis tarah gul ki chaman bandi ho khushboo ke liye,
Dil dhadkta hai agar agar unka to Urdu ke liye,
In ki koshish ne diya Urdu ko husn-e-lazawaal,
In ki khidmat ki adab mein hai nahi koi misaal.
Aap ne sher-o-adab ko, fun ko zinda kar diya,
Haal sabka apni web directory main likh diya,
Kis qadar ehsaan in ka hum ginayeN dosto,
Pad gaye alfaaz kam, kaise batayeN dosto.Tariq_on_Muslim_january_2014 NEW
Categories: Muslim Saleem

EK SHER – MUSLIM SALEEM – LAMHA-E-WASL

January 6, 2014 Leave a comment

Ek sher lamha e waslLAMHA-E-WASL HAI YEH, LAMHA-E-FARYAAD NAHEEN

AA GAYE TUM TO HAMEIN KOI GILAA YAAD NAHEEN

 

Categories: Muslim Saleem