Archive

Archive for October, 2012

Barqi Azmi on Samina Raja

October 31, 2012 Leave a comment

Advertisements

Samina Raja is no more

October 31, 2012 Leave a comment

Categories: Urdu News

Barqi Azmi poetic tribute to Saba Akbarabadi

October 31, 2012 Leave a comment

Read more…

October 29, 2012 Leave a comment

 

Noted Urdu litterateur Dr. Surya Bali visits Muslim Saleem

October 28, 2012 Leave a comment

Bhopal, October 26, 2012. Noted Urdu litterateur Dr. Surya Bali visited Muslim Saleem’s house at Khanugaon, Bhopal on Saturday, October 26, 2012. US-return Dr. Surya Bali is a resident of Allahabad. He has joined the All-India Institute of Medical Sciences, which is being established in Bhopal. Apart from being a specialist doctor, Dr. Surya Bali is also a good Urdu poet and writer. It was his first visit to Muslim Saleem even though he was acquainted with the latter through his Urdu directories on websites. Dr. Surya Bali was so overwhelmed by the scenic beauty from the rooftop of Muslim Saleem’s house that he himself snapped several shots. Here the memorable pictures of Dr. Surya Bali’s visit.

Dr. Surya Baali with Mr. Muslim Saleem at the rooftop of Muslim Saleem’s house. Read more…

Categories: Urdu News

Ahmad Ali Barqi Azmi – tarhi ghazal

October 28, 2012 Leave a comment

الف کے ہفتہ وار فی البدیہہ طرحی مشاعرہ نمبر ۹۲ کے مصرعہ طرح ’’ اس طرح عید مناؤ تو کوئی بات بنے‘‘ پر میری کاوش

احمد علی برقی اعظمی

دل سے دل آج مِلاؤ تو کوئی بات بنے

اس طرح عید مناؤ تو کوئی بات بنے‘‘’’

روئے زیبا یہ دکھاؤ تو کوئی بات بنے

نگہہِ ناز اُٹھاؤ تو کوئی بات بنے

مار ڈالے نہ یہ دزدیدہ نگاہی مجھ کو

تم مرے سامنے آؤ تو کوئی بات بنے

کب سے میں گوش بر آواز ہوں سننے کے لئے

کچھ سنو اور سناؤ تو کوئی بات بنے

آتشِ شوق بجھائے نہ بجھے گی تم سے

اس کو سینے سے لگاؤ تو کوئی بات بنے

 تم یہ بے وقت کی شہنائی بجاتے کیوں ہو

وقت کے ساز پہ گاؤ تو کوئی بات بنے

بِن بُلائے تو نہ جاؤں گا خدا کے گھر بھی

تم اگر مجھ کو بُلاؤ تو کوئی بات بنے

ایسا لگتا ہے کہ تم دوشِ صبا پر ہو سوار

چھوڑ کر مجھ کو نہ جاؤ تو کوئی بات بنے

یوں تو ویرانی میں حاصل ہے مہارت تم کو

خانۂ دل یہ بساؤ تو کوئی بات بنے

عیدِ قرباں کے بہانے ہی مسلمانوں کو

خوابِ غفلت سے جگاؤ تو کوئی بات بنے

تم سے روشن ہے مری شمعِ شبستانِ حیات

اِس کی لو اور بڑھا ؤ تو کوئی بات بنے

بُت بنے بیٹھے ہو کیوں سامنے گُم سُم آخر

سازِ دل پر مرے گاؤ تو کوئی بات بنے

ابھی آئے ہو ابھی جانے کی جلدی کیا ہے

عید کا جشن مناؤ تو کوئی بات بنے

ایک مدت سے ہو منظورِ نظر تم میرے

تم مجھے اپنا بناوٌ تو کوئی بات بنے

درمیاں کوئی نہ تفریق من و تو کی رہے

دیدہ و دل میں سماؤ تو کوئی بات بنے

امتحاں زندہ دلی کا ہے تمھاری برقی

رونے والوں کو ہنساؤ تو کوئی بات بنے

Rahmat Ilahi Barq on Eid-ul-Fitr

October 26, 2012 Leave a comment

Read more…