Home > Uncategorized > Barqi Azmi for Inhiraf Mushaira

Barqi Azmi for Inhiraf Mushaira

انحراف کے ۲۰ ویں فی البدیہہ مشارے بتاریخ ۲۰ دسمبر کے لئے میری کاوش احمد علی برقی اعظمی وہ کرتے ہیں جیسا کبھی ویسا نہیں کرتے ہم اپنے مفادات کا سودا نہیں کرتے

چاہا ہے جسے اُس سے کنارا نہیں کرتے ہم اپنی محبت کا تماشا نہیں کرتے

جو آئے کرے جی میں کبھی اُف نہ کریں گے کم ظرف سے اظہارِ تمنا نہیں کرتے

ہے فرض جو اپنا وہ ادا کرتے رہیں گے ہم اُس کی طرح وعدۂ فردا نہیں کرتے

کشتی کو بچا لیتے ہین منجدھار میں جاکر طوفان کا ساحل ے نظارا کرتے

ہیں سب کے مسیحا تو مسیحائی کریں وہ ہم کوئی مسیحائی کا دعوا نہیں کرتے

خود اپنے گریباں میں نہیں جھانکتے کیوں وہ جو ہم سے گلہ کرتے ہیں اچھا نہیں کرتے

ہیں امن کی آشا کے جہاں میں جو علمدار نفرت کے کبھی بیج وہ بویا نہیں کرتے

جن سے بھی پڑا سابقہ تھے مصلحت اندیش دینا وہ مرا ساتھ گوارا نہیں کرتے

جو آج ہے کرنا اسے کل کیوں کریں برقی ہم اس کی طرح وعدۂ فردا نہیں کرتے

Categories: Uncategorized
  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: