Home > Uncategorized > Barqi Azmi – tarhi ghazal

Barqi Azmi – tarhi ghazal

انحراف کے فی البدیہہ طرح مشاعرے بتاریخ ۱۳ دسمبر کے لئے میری کاوش احمد علی برقی اعظمی بہت صبر آزما اُس کی کمی تھی ’’مرے اندر اُداسی بس رہی تھی‘‘

نہ پوچھو کس قدر سوزِ دروں تھا وہ میرا خون جیسے پی رہی تھی

نہ تھی معلوم وجہِ بدگمانی نہایت روح فرسا بے رخی تھی تھی

نہ تھی معلوم وجہِ بدگمانی نہایت روح فرسا بے رخی تھی تھی

تھی اپنے سائے سے بھی مجھ کو وحشت بہرسو تیرگی ہی تیرگی تھی

مرا دل خوں کے آنسو رورہا تھا نشاط و کیف کی محفل سجی تھی

میں آہِ سرد تنہا بھر رہا تھا شبِ فرقت قیامت کی گھڑی تھی

سخاوت عام تھی ساقی کی سب پر مری قسمت میں شاید تشنگی تھی

قیامت خیز تھا اُس کا تبسم نہ جانے کیسی برقی دل لگی تھی

بباطن دشمنِ جاں تھا وہ میرا بظاہر اُس ے میری دوستی تھی

Categories: Uncategorized
  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: