Home > Uncategorized > Namwar shuara ke ash’ar

Namwar shuara ke ash’ar

نامور استاذہ کرام  کے نامور نما یندہ  اشعار

میرزا رفیع سودا

کیفیتِ   چشم   اس  کی مجھے یاد ہے سودا

ساغر کو مرے ہاتھ سے لینا کہ میں چلا

میر تقی میر

دیکھ تو دل کہ جاں سے اٹھتا ہے

یہ دھواں سا کہاں سے اُٹھتا ہے

محمد ابراہیم ذوق

اب  تو  گھبرا    کہ  یہ  کہتے  ہیں  کہ  مَر  جایئں گے

مر   کے   بھی   چین نہ پایا  تو   کدھر   جاییں    گے

میرزا غالب- اردو شاعری کا تاجِ سخن ، اردو  کا ہومر

ہزاروں   خاہشیں ایسی کہ ہر خاہش پہ دم نکلے

بہت نکلے میر ے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے

مومن خان مومن

تم میر  ے پاس  ہوتے  ہو  گویا

جب    کوٰٰ ٰٰ ی   دوسرا   نہیں  ہوتا

امیر مینای

خنجر    چلے   کسی   پہ   تڑپتے   ہیں  ہم  امیر

سارے  جہاں  کا  درد  ہمارے  جگر   میں   ہے

حسرت موہانی

خرد   کا   نام  جنوں  رکھ    دیا  جنوں  کا    خرد

جو  چاہے  آپ   کا    حسنِ   کرشمہ  ساز کرے

خواجہ میر درد

اُن لبوں نے     نہ    کی مسیحای

ہم نے سو سو طرح سے مَر دیکھا

میرزا داغ دھلوی

رخِ روشن   کے  آگے  شمع  رکھ کر وہ یہ کہتے ہیں

اُدھر  جاتا  ہے  دیکھیں  یا  اِدھر  آتا  ہے  پروانہ

حیدر علی آتش

یہ آرزو تھی   تجھے   گلُ کے رو برو کرتے

اور     ہم   بلبلِ  بے تاب  گفتگو   کرتے

شیفتہ

اتنی    نہ   بڑھا    پاکئ   دامن   کی   حکایت

دامن   کو    زرا    دیکھ    زرا  بندِ  قبا    دیکھ

اب  چند   اور بڑے شعراٰء کے  منتخب  اشعار

فانی بدایونی

اک    معمہ    ہے  سمجھنے    کا   نہ  سمجھانے    کا

زندگی  کا ہے   کو   ہے   خواب    ہے   دیوانے کا

جگر مرادآبادی

اُس نے اپنا بنا کے چھوڑ دیا

کیا اسیری ہے کیا رہای ہے

فیض احمد فیض

مقامِ فیض   کوی   راہ میں  جچا ہی نہیں

جو کوۓِ یار سے نکلے تو سوے دار چلے

احمد فراز

پہلے نظامِ عدل ہوا ہم سے انتساب

پھر یوں ہوا قتل بھی ہم کر دیے گیے

پروین شاکر

ممکنہ فیصلوں میں سے ہجر کا فیصلہ بھی تھا

ہم نے تو ایک بات کی اس نے کما ل کردیا

احمد ندیم قاسمی

اُن کا آنا حشر سے کچھ کم نہ تھا

اور جب پلٹے قیامت ڈھا گیے

ابنِ انشائ

اس شہر میں   کس   سے  ملیں  ، ہم  سے  تو چھوٹی محفلیں

ہر   شخص  تیرانام     لے     ہر     شخص     دیوانہ    تیرا

بشیر بدر

اُجالے اپنی یادوں کے ہمارے ساتھ رہنے دو

نہ جانے کس گلی میں زندگی کی شام ہو جاۓ

 ناصر کاظمی

کہتے     ہیں   غزل   قافیہ   پیمای   ہے     ناصر

یہ    قافیہ      پیمای     ذرا    کر     کہ   تو   دیکھو

حسرت موہانی

شعر اصل میں وہی ہیں حسرت

سنتے   ہی جو   دل میں اُتر   جاییں

 اور اب سراج اورنگ آبادی کی مشہورِ زمانہ اُس غزل کا اک قطعہ ، جس غزل نے حضرتِ سراج  کو زمین سے آسمان پہ پہنچا دیا ۔اس غزل کے بغیر اردو شاعری کا کوی بھی انتخاب ادھورا ہے

خبر    تحیّرِ عشق  سُن  نہ  جنوں رہا   ، نہ   پری   رہی

نہ تو تُو  رہا  نہ ، نہ  تو  میں رہا جو رہی سو بے خبری رہی

شہِ بے  خودی   نے  عطا کیا مجھے   اب   لباسِِ برھنگی

نہ خرد کی بخیہ گری رہی ، نہ   جنوں   کی پردہ دری رہی

Categories: Uncategorized
  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: