Home > Urdu poems and prose latest > Dr. Zaiba Zeenat – ghazal

Dr. Zaiba Zeenat – ghazal

یوں تیری بزم شبستاں میں قدم رکھا تھا

جیسے خوابوں کے گلستاں میں قدم رکھا تھا

ایسا لگتا تھا کہ تارے ہیں میری راہوں میں

اس طرح جشن چراغاں میں قدم رکھا تھا

چاند کے پاس مچلتی تھیں گھٹائیں پیہم

ایسی پُر کیف بہاروں میں قدم رکھا تھا


ایک ہی موڑ پر دل نے یہ تڑپ کر کے کہا

آہ کس وادئیِ ویراں میں قدم رکھا تھا

وہ بھی کیا دن تھے کیا لمحات تھے زیبا جِن میں

زندگی کی رہِ پیچاں میں قدم رکھا تھا

  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: