Home > Urdu poems and prose latest > Ghazal – Raz Nawadvi (Manoj Kumar Sinha) October 18

Ghazal – Raz Nawadvi (Manoj Kumar Sinha) October 18

غزل
  –
راز نوادوی

جیسے خالی جام ہوں ایسے اچھا لے جائیں گے

کیا خبر تھی یوں بھی محفل سےنکالے جائیں گے

ہوش والے گر یوں محفل سے نکا لے جائیں گے

پھر یہ بتلا کیسے دیوانےسنبہا لے جائیں گے

اور بھی بڑھ جائے گا احساس_محرومی مرا

سامنے سے جب مرے لبریز پیا لے جائیں گے
 
جل اٹھیں گے ہر قدم پر تیری یادوں کے دئے

راستے تیرہ شبی میں یوں اجا لے جائیں گے

راز جب چھیڑے گا اپنی داستان_زندگی

دیکھنا جذبات تمکو بھی بہا لے جائیں گے

  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: