Home > Urdu poems and prose latest > شاعرِ مشرق علامہ اقبال کے ایک فارسی قطعہ کا منظوم اردو ترجمہ: احمد علی برقی اعظمی

شاعرِ مشرق علامہ اقبال کے ایک فارسی قطعہ کا منظوم اردو ترجمہ: احمد علی برقی اعظمی

ہنوز ایں چرخِ نیلی کج خرام است

ہنوز ایں کارواں دور از مقام است
زِ کا رِ بے  نظامِ  ا و چہ  گو یم
تو می دانی کہ ملت بے امام است

لغت

چرخ ِ نیلی = نیلے رنگ کا آسمان۔   چرخ = آسمان۔   کج =، ٹیڑھا۔    خرام = چال ۔ کج خرام = ٹیڑھی چال چلنے والا۔  کار = کام، معاملات۔    کارے بے نظام = اس کے بےنظام کام سے، اس کی غیر منظم زندگی سے۔   تو دانی = تو جانتا ہے، تجھے معلوم ہے، دانستن = جاننا۔   ملّت = ملّتِ اسلامیہ۔
یا رسول اللہ صلیٰ اللہ علیہِ وسلم، یہ ٹیڑھی چال چلنے والا آسمان ابھی تک ہماری مخالفت پر اَڑا ہوا ہے، ابھی تک اْمّتِ مسلمہ اپنی منزل سے دور ہے، مِیں اس کاروان ِ ملّت کی ابتری اور زبوں حالی اور بد نظمی کا آپ سے کیا حال بیان کروں، ہمارے آقا آپ کو تو خود معلوم ہے کی اس قوم کا     کو ئی قائد اورراہنما نہیں ہے
ترجمہ: اویس جعفری

منظوم اردو ترجمہ :احمد علی برقی اعظمی

آج بھی یہ آسمانِ نیلگوں ہے کج خرام

آج بھی اس کارواں سے دور ہے اس کا مقام

کیسی بے نظمی ہے اس میں کیا بتاؤں آپ کو

آپ دانا ہیں، نہیں اس قوم کا کوئی امام

  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: