Home > Urdu poems and prose latest > Ghazal Barqi Azmi احمد علی برقی اعظمی

Ghazal Barqi Azmi احمد علی برقی اعظمی

جدید ادبی تنقیدی فورم کے فی البدیہہ طرحی حمدیہ مشاعرے مورخہ ۲۷ جولائی ۲۰۱۲ کے لئے

کونین کی ہر شے میں تو ہی جلوہ نما ہے

’’اے رب سمٰوات تری ذات ورا ہے‘‘

کیوں مجھ کو زمانہ یہ مٹانے پہ تُلا ہے

قبضے میں ترے جب کہ سزا اور جزا ہے

ناکردہ گناہی کی سزا جھیل رہا ہوں

ہر وقت مرے سامنے اک موجِ بَلا ہے

تو اول و آخر ہے، تو ہی ظاہر و باطن

تو ہی ہے جو بندوں کی رگِ جاں سے مِلا ہے

باہر نہیں کچھ قبضۂ قدرت سے ہے تیرے

ہر حال میں درکار مجھے تیری رضا ہے

مصروف ہے ہر تارِ نَفَس حمد و ثنا میں

جو وِرِدِ زباں سب کے ہے تیری ہی نوا ہے

سب رزمگہہِ زیست میں ہیں درپئے آزار

ہر وقت تعاقب میں مرے تیرِ قضا ہے

آمادہ جسارت پہ ہے کیوں آدمِ خاکی

اوقات ہے کیا اس کی اسے جب یہ پتا ہے

طالب ہے ترے رحم کی یہ ملتِ مظلوم

تو مالکِ کُل ہے یہ فقط تجھ کو روا ہے

وا ہوتا ہے رمضان میں دروازۂ رحمت

برقی کو بھی درکار تری جود و سخا ہے

  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: