Home > Urdu poems and prose latest > Ghazal Ai Musawwir (عاطف جاوید عاطف

Ghazal Ai Musawwir (عاطف جاوید عاطف


تجھ سے گر بن سکے بنا کر لا

اے مصور بنا !! بنا کر لا

حبس کو پھیلتا دکھا دل میں

پھر اُسے جا بجا بنا کر لا


درد کچھ لا دوا سا لگنے دے

زخم کو نارسا بنا کر لا


جس جگہ پر دیا بنا ہے دیکھ

اب یہاں پر ہوا بنا کر لا


چیت کا چاند ، چودھویں کی رات

جھیل کا آینہ بنا کر لا


آنکھ میں رنگ بھر عنابی سا

پھر آسی کو خفا بنا کر لا


اک مسافر تھکا ہوا سا اور۔

دور تک راستہ بنا کر لا


دور تک دیکھتی ہوئی آنکھیں

آسماں میں خلا بنا کر لا


جس جگہ پر تمام ہو رستہ

بس وہیں حادثہ بنا کر لا




 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(عاطف جاوید عاطف

عاطف

  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: