Home > Urdu poems and prose latest > ایک فی البدیہہ غزل برائے دوستی

ایک فی البدیہہ غزل برائے دوستی

احمد علی برقی اعظمی

کیجئے اب کچھ برائے دوستی

روح پرور ہے نوائے دوستی

 

ہے کوئی اس پر کہے لبیک جو

دے رہا ہوں میں صدائے دوستی

 

لوحِ دل پر نقش ہے اب وہ مری

زیبِ تن ہے جو قبائے دوستی

 

دشمنی ہو جائے بے نام و نشاں

کاش ہو ایسی فضائے دوستی

 

ہو میسر وہ چمن سب کو جہاں

چلتی ہو ہر سو ہوائے دوستی

 

امنِ عالم کے لئے ہو سازگار

ابتدا و انتہائے دوستی

 

خواہشِ دیرینہ برقی کی ہے یہ

سر پہ ہو سب کے ردائے دوستی

  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: